Featured post

خطبات اقبال - اسلام میں تفکر کا انداز جدید

یقیناً اللہ کے نزدیک بدترین قسم کے جانور وہ بہرے گونگے لوگ ہیں جو عقل سے کام نہیں لیتے (8:22 قرآن) جس کو چاہتا ہے حکمت عطا کرتا ہے، اور...

خالق کائنات کون؟ The Creator

خالق کائنات کون؟
ہم کون ہیں؟ ہم کیوں اس دنیا میں موجود ہیں ؟ اس کائنات کو کسی نے تخلیق کیا  یا اتفاقا خود بخود معرض وجود میں آگئی؟ اس طرح کے لا تعداد سوالات انسانی ذہن میں آتے ہیں جن کے جوابات فلسفی، مفکر، مذہبی پیشوا اورسائنسدان صدیوں سےمعلوم کرتے اور پیش کرتے رہے ہیں- ان میں ایک عظیم طاقت کا تصورنمایاں طور پر ابھر کر سامنے آتا ہے، جس کوکچھ لوگ (ضروری نہیں کہ وہ سائنسدان ہوں) عظیم ہستی  خدا اور کچھ   فطرت اورغیر مرئی طاقت جیسے ناموں سےجانتے ہیں- انسانوں کے گروہوں کے خدا یا دیوتاؤں (یا جس کسی کو بھی وہ مقدس، مافوقِ الفطرت طاقت و ہستی سمجھتے ہوں) کے ساتھ تعلق کوعمومی طور پر'مذہب' کے طور پر جانا جاتا ہے- باقی لوگوں کو لا مذھب کہا جا سکتا ہے- سب سے اہم مسئلہ جو  خدا کو ماننے والوں کی توجہ کا مرکز رہا؛ کہ  کس طرح عقل سے خدا کے وجود کو ثابت کیا جائے؟
The Creator: The idea of a Supreme Power who is the First Cause of all things, the Creator and Ruler of heaven and earth has always been part of human nature from the beginning. He was not represented by images and had no temple or priests in His service. He was too exalted for an inadequate human cult. Hence there had been a primitive monotheism before people had started to worship a number of deities. Generally He faded from the consciousness of his people who formed images of many deities, His assistants, thus began the paganism. The name given to this divine Supreme Creator and Sustainer in English is GOD. The belief of a Supreme deity who created the world and governs it, still remains among the primitive African tribes. The belief on God was followed by His worship in different cultures. The relation of a group of human beings to God or the gods or to whatever they consider sacred or, in some cases, merely supernatural is known as religion. Keep reading >>>
اس کتاب میں اس سے منسلک موضوعات کےجوابات تلاش کرنے کی کوشش کی گئی ہے- ابراہیمی مذاھب یعنی یہودیت، مسیحیت اور اسلام، تلاش حق کی فطری انسانی خواہش کو علم وحی کے ذریعےجو کہ نبیوں اور رسولوں پر نازل ہوتا ہے ،پورا کرنے کی کوشش کرتے ہیں- اس کے ساتھ ساتھ یھاں  حضرت ابراہیم علیہ السلام  سے منسلک تین مذاہب تاریخی طور پر 'خدا' اور 'تخلیق' کے متعلق ترقی پزیرسائنسی پہلوؤں اور تھیوسوفیکل (صوفیانہ, خدائی حکمت) گہرائی  پر بھی نظرڈالیں گے-اسلام حضرت ابراہیم علیہ السلام کے اصل ورثہ کے طور پر ظاہر ہوتا ہے جوعام تصور کہ؛ 'اسلام ایک نیا مذھب ہے جو حضرت محمد ﷺ نے قایم کیا' سے مختلف ہے- یہ کتاب''خالق کائنات کون؟''  چار کتب کے سلسلہ میں پہلی ہے، باقی تین  'تخلیق' ، 'راہنمائی'اور 'اسلام حضرت ابراہیم علیہ السلام کا ورثہ' ہیں جو کہ انگریزی میں اس لنک پر موجود ہیں: http://freebookpark.blogspot.com
انڈیکس
  1. مکمل کتاب؛ لنک: https://goo.gl/kgkTl8
.................................................................................................. 

 کا اردو ترجمہ “The Creator”
مصنف: آفتاب احمد خان


سلام فورم نیٹ ورک -  Peace Forum Network
علم، انسانیت، مذہب، ثقافت، روحانیت، رواداری، امن


“The Creator” Published in 'The Defence Journal'[ 2006-2013],  2-C Zamzama Boulevard, Pathfinder Foundation, Clifton, Karachi, Pakistan  www.defencejournal.com.This book is available at: http://justonegod.blogspot.com/2015/06/creator.html
اس مکمل کتاب کی غیرمنافع، مفت تقسیم کی اجازت ہے-اس کے کسی حصہ کو شیر کرنے کے ساتھ http://SalaamForum.blogspot.com کا ریفرنس دیں-

اس کتاب کا لنک: https://goo.gl/kgkTl8

نوٹ:

مَّن يَشْفَعْ شَفَاعَةً حَسَنَةً يَكُن لَّهُ نَصِيبٌ مِّنْهَا ۖ وَمَن يَشْفَعْ شَفَاعَةً سَيِّئَةً يَكُن لَّهُ كِفْلٌ مِّنْهَا ۗ وَكَانَ اللَّـهُ عَلَىٰ كُلِّ شَيْءٍ مُّقِيتًا (النسا،85) ترجمہ : جو بھلائی کی سفارش کریگا وہ اس میں سے حصہ پائے گا اور جو برائی کی سفارش کرے گا وہ اس میں سے حصہ پائے گا، اور اللہ ہر چیز پر نظر رکھنے والا ہے (قرآن ;4:85)

SMS / WhattsApp پر شیر کرنے کے لیتے مندرجہ ذیل ٹیکسٹ کاپی کرکہ پیسٹ کریں اور عزیزوں ، دوستوں سے شیر کریں:
اس کائنات کو کس نے تخلیق کیا ؟ http://salaamforum.blogspot.com/2017/01/creator.html


…………………..

~~~~~~~~~~~~~~~~~~
مزید پڑھیں:
~ ~ ~ ~ ~ ~~ ~ ~ ~ ~ ~  ~ ~ ~  ~

More:

~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~  ~ ~ ~  ~

Humanity, Knowledge, Religion, Culture, Tolerance, Peace 

Peace Forum Network
Visited by Millions
      
Facebook Page

No comments: